’کراچی کا ساحل انتہائی خطرناک‘

پاکستان میں گندگی اور غلاظت کے ساتھ خطرناک کیمیکل اور ہسپتالوں کا انتہائی زہر آلود اور بیماریوں سے بھرا فضلہ بھی ٹھکانے لگانے کا باقاعدہ رواج نہیں ہے۔

کراچی میں گندگی اور کچرے سے پریشان اور بارشوں کے سیلابی پانی میں ڈوبے رہائشیوں کے لیے مزید بری خبر یہ ہے کہ اب ساحل بھی زہریلے مواد کا ڈمپنگ کیمپ بن چکا ہے۔

پاکستان کے سابق فاسٹ بولر وسیم اکرم کی آسٹریلوی نژاد اہلیہ شنیرا نے سوشل میڈیا کے ذریعے کراچی کے ساحلی علاقے کلفٹن کے بارے میں ایک ویڈیو شیئر کر کے بتایا ہے کہ ہسپتالوں کا فضلہ وہاں پہنچ چکا ہے۔

انہوں نے یہ ویڈیو خود بنائی ہے اور اس میں ان کا تبصرہ بھی شامل ہے جس میں وہ کہہ رہی ہیں ’اس ساحل پر اب انتہائی خوفزدہ ہوں۔‘

شنیرا اکرم نے ٹویٹ میں لکھا ہے کہ ’ساحل کی طویل پٹی پر ہسپتالوں کا فضلہ جن میں سینکڑوں کی تعداد میں کھلی سرنج بھی ہیں بکھرے پڑے ہیں اور یہ انتہائی خطرناک ہے۔ اس ساحل کو فوری طور پر عوام کے لیے بند کیا جائے۔‘

انہوں نے کہا ہے کہ یہ خطرناک مواد سمندر کی لہروں کے ذریعے یہاں تک پہنچا ہے۔ ’یہ کئی کلومیٹر تک پھیلا ہوا ہے اور کلفٹن کا ساحل اس وقت انتہائی خطرناک ہے اس کو فوری بند کرنے کی ضرورت ہے۔‘

شنیرا اکرم کے مطابق وہ گذشتہ چار برس سے اس ساحل پر واک کر رہی ہیں اور کبھی اتنی خوفزدہ نہیں ہوئیں جتنی آج ہیں۔ انہوں نے حکام سے کہا ہے کہ اس ساحل کو فوری طور پر عوام کے لیے بند کیا جائے اور یہاں ہنگامی صورتحال کا اعلان کیا جائے۔

ان کی ٹویٹ پر ایک صارف ہانیہ احمد نے لکھا ہے کہ ’یہ دل توڑنے والے مناظر ہیں۔‘ جس پر شنیرا اکرم نے ان کو جواب دیا ہے کہ ’ہم دل توڑنے والی حد سے بہت پہلے آگے نکل آئے ہیں۔ اب یہ انتہائی خطرناک صورتحال ہے۔‘

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close