چیئرمین نے اپنا تقرر کرنے والے گرفتار کرا دیے

پاکستان میں احتساب کے قومی ادارے نیب کے چیئرمین جاوید اقبال کو اس وقت کے وزیراعظم شاہد خاقان عباسی اور حزب اختلاف کے قائد خورشید نے آئینی ذمہ داری کے تحت باہمی مشاورت سے عہدے پر لگایا تھا۔

دلچسپ امر یہ ہے کہ دو سال بعد لگانے والی دونوں شخصیات اسی چیئرمین کے حکم پر کرپشن کے الزامات میں نیب کی حراست میں ہیں۔

صحافی فخر درانی نے اس صورتحال پر ٹویٹ کرتے ہوئے تبصرہ کیا ہے۔

سوشل میڈیا صارفین نے اس ٹویٹ پر دلچسپ تبصرے کیے ہیں۔

یاد رہے کہ پیپلز پارٹی نے حزب اختلاف میں رہتے ہوئے جاوید اقبال کا نام تجویز کیا تھا جس پر ن لیگ کی حکومت نے رضامندی ظاہر کی تھی۔

اسلام آباد میں یہ بات تقریبا ہر صحافی کو معلوم ہے کہ جاوید اقبال کا نام تجویز کرانے والے اور اس پر ن لیگ کو راضی کرانے میں ملک کے بڑے پراپرٹی ٹائیکون کا کردار تھا۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close