وزیراعظم اور کشمیری

محمد اشفاق ۔ تجزیہ کار

جناب وزیراعظم صاحب کو شدید غلط فہمی یا شدید بے حمیتی لاحق ہے ورنہ ۔۔

بھارت کے موقف کو تقویت تب پہنچتی ہے جب پاکستانی وزیراعظم مودی کے انتخابات جیتنے کی دعائیں کرتا ہے۔

بھارت کا بیانیہ تب مضبوط ہوتا ہے جب پاکستان اسے سلامتی کونسل کی رکنیت دلوانے کیلئے ووٹ دیتا ہے-

بھارت کا موقف تب تگڑا ہوتا ہے جب کشمیر ہتھیا لئے جانے پر ہمارا وزیراعظم پارلیمنٹ میں پوچھتا ہے کہ کیا کروں بھارت پہ حملہ کر دوں کیا؟

بھارت کا بیانیہ تب مضبوط ہوتا ہے جب پاکستان دو ماہ میں او آئی سی کا ایک سربراہی اجلاس طلب کرنے میں بھی ناکام رہتا ہے-

بھارت کا موقف تب مضبوط ہوتا ہے جب انسانی حقوق کونسل میں اپنی قرارداد پیش کرنے کے وقت ہمارا نمائندہ غسل خانے میں جا چھپتا ہے-

بھارتی بیانیہ اس وقت طاقت پکڑتا ہے جب پاکستانی بیانیہ مقبوضہ کشمیر میں کرفیو ختم کروانے تک محدود ہو جاتا ہے-

بھارت کے موقف کو تب پذیرائی ملتی ہے جب ہمارا وزیراعظم نیویارک میں بیٹھ کر ایران، یمن، افغانستان کے تنازعوں میں ثالث بننے کی بڑھکیں مارتا ہے مگر کشمیر پہ جنرل اسمبلی میں اپنے فین کلب کو بٹھا کر تالیاں بجوانے سے زیادہ کچھ نہیں کر پاتا۔

بھارت کا بیانیہ تب مضبوط ہوتا ہے جب بالکل بھارت ہی کی طرح پاکستان میں بھی کشمیریوں کے جلسے جلوسوں کا میڈیا بلیک آؤٹ کیا جاتا ہے- انٹرنیٹ سروس معطل کی جاتی ہے اور نہتے کشمیریوں پر آنسو گیس اور لاٹھی چارج کیا جاتا ہے-

اپنے مظفرآباد کے ناکام جلسے سے آپ کو یہ اندازہ ہو ہی گیا ہوگا کہ کشمیریوں کی اب آپ اور آپ کی حکومت سے کتنی نیک توقعات باقی رہ گئی ہیں۔ اب آپ رہی سہی پر بھی پانی پھیرنے کے چکر میں ہیں۔

جس ریاست کے کرتا دھرتا مذاکرات کے وقت الجہاد الجہاد کے نعرے لگوائیں اور جنگ کے وقت امن کے گیت گاتے پھریں، اس کے موقف کو پوری دنیا جوتے کی نوک پر رکھتی ہے۔

پاکستانی ریاست کے ردعمل میں ذرا سی بھی جان ہوتی تو آج کشمیری مایوسی کی اس حد کو نہ چھو رہے ہوتے جہاں لاکھوں افراد لائن آف کنٹرول پہ موت کو گلے لگانے کو بیتاب گھروں سے نکل کھڑے ہوئے ہیں۔

اور پاکستانی ریاست کے کرتا دھرتاؤں میں ذرا سی بھی غیرت و حمیت باقی ہوتی تو وہ اس مارچ کو سنسر کرنے کی بجائے لائیو کوریج دے رہے ہوتے۔ دنیا لاکھوں نہتے افراد کے دن دیہاڑے، علی الاعلان لائن آف کنٹرول کی طرف مارچ کو دہشتگردی نہیں سمجھتی۔ دنیا رات کی تاریکی میں سولہ سترہ سال کے برین واش کئے ہوئے بچوں کو لائن آف کنٹرول پار کروانے کو دہشتگردی سمجھتی ہے- یہ بات اب بھی آپ کی سمجھ میں نہیں آئی تو پھر کبھی نہیں آئے گی۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close