کشمیری مظاہرین نے شرائط رکھ دیں

پاکستان کے زیر انتظام کشمیر میں خودمختار ریاست کی حامی جماعت جموں وکشمیر لبریشن فرنٹ کے کارکنوں کا کنٹرول لائن عبور کرنے کے لیے مارچ چناری کے مقام پر ہے جہاں سے آگے مقامی انتظامیہ نے رکاوٹیں کھڑی کی ہیں۔

پیر کو چناری میں جموں کشمیر لبریشن فرنٹ کے زونل صدر ڈاکٹر توقیر گیلانی اور مرکزی ترجمان رفیق ڈار نے سلیم ہارون و دیگر کے ہمراہ نے پریس کانفرنس میں کہا ہے کہ ان کو سرینگر تک جانے کے لیے راستہ دیا جائے وگرنہ شاہراہ سرینگر پر ان کا دھرنا غیر معینہ مدت تک جاری رہے گا۔

پریس کانفرنس میں لبریشن فرنٹ کے قائدین نے کہا کہ وہ پاکستان اور انڈیا کی حکومت سے مذاکرات نہیں کریں گے بلکہ صرف اقوام متحدہ اور اس کی سیکورٹی کونسل کے نمائندوں سے بات کریں گے۔

انہوں نے کہاکہ صرف دو مطالبات ہیں ۔حکومت اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل کے نمائندے اور اقوام متحدہ کے سیکیورٹی کونسل کے پانچ ممالک کے ممبران کے نمائندوں کو یہاں بلائے۔ہم اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل اور سلامتی کونسل کے ممبران ممالک کت نمائندوں کو ہم اپنے مطالبات پیش کریں گے۔

خیال رہے کہ ہزاروں کشمیری مظاہرین نے جمعے کو کنٹرول لائن کی جانب مارچ شروع کیا تھا جو مختلف علاقوں سے چناری پہنچے ہیں۔

Related Articles

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close